وجود دیکھہ  کر  اپنا  کچھ   حیرانی   سی  ہوئ،
تھوری  خوشی  سی  تھی  تھوری  پریشانی  بھی  ہوئ،
سوال  ابھرتے  گےء جواب  ڈوھنڈے لگی،
جواب  نہ  پا کر  تھوری  پشیمانی  بھی  ہوئ،
سمجھنے سمجھانے  میں  بیتے  وہ  لمحات،
یاد  آۓ  تو  تھوری  ویرانی  بھی  ہوئ،
آنکھیں  نم  بھی  ہویئں  اور  گال  لال بھی،
گزرے  ہوۓ  سالوں  میں تھوری  کھسیانی  بھی  ہوئ،
رنگوں  سے  لے  کر  لفضوں  سے کھیل  کر،
آگے  بڑھنے  کے  کچھہ  قابل  بھی  ہوئ،
چوبیس  گھنٹے  بولتی تھی کبھی،
خاموشی  کی  چادر  اوڑھتی  ہوئ،
آج  شیشے  میں  جو  نظر  پڑی  میری،
ایک  کہانی  جانی  پہچانی  ہوئ۔
فرار۔

Advertisements